روسی وزیر دفاع کا دورۂ بھارت / اساتذہ کی ہڑتال / قارئین کی خدمت میں

روسی وزیردفاع مارشل استینوف تیس رکنی وفد کے ہمراہ ان دنوں بھارت کے دورہ پر ہیں اور انہوں نے بھارتی وزیراعظم کے ساتھ ایک گھنٹہ کی علیحدہ ملاقات کے علاوہ بھارتی رہنماؤں سے باقاعدہ مذاکرات کیے اور بھارت کی دفاعی ضروریات کا جائزہ لینے کے بعد یہ کہا کہ بھارت کو دفاعی طور پر خودکفیل بنانے کے لیے روس اس کی امداد جاری رکھے گا اور بھارت کو اکیلا نہیں چھوڑا جائے گا۔ روس اور بھارت کے درمیان دوستی کا معاہدہ اور دفاع میں تعاون کے عنوان سے بھارت کو بھاری اسلحہ کی فراہمی کا یہ سلسلہ ایک عرصہ سے جاری ہے ۔ ۔ ۔ مکمل تحریر روسی وزیر دفاع کا دورۂ بھارت / اساتذہ کی ہڑتال / قارئین کی خدمت میں

۲۶ مارچ ۱۹۸۲ء

ارباب سکندر خان خلیل شہید

صوبہ سرحد کے سابق گورنر اور ملک کے معروف سیاسی رہنما ارباب سکندر خان خلیل گزشتہ روز صبح کے وقت جبکہ وہ معمول کے مطابق سیر کر رہے تھے، قاتلوں کی گولیوں کا نشانہ بنتے ہوئے خالق حقیقی سے جا ملے، انا للہ وانا الیہ راجعون۔ ارباب صاحب مرحوم کا شمار بااصول، معتدل مزاج اور ایثار پیشہ راہنماؤں میں ہوتا تھا ۔ ۔ ۔ مکمل تحریر ارباب سکندر خان خلیل شہید

۱۹ مارچ ۱۹۸۲ء

فرقہ وارانہ کشیدگی اور ہماری ذمہ داری

اردن کے شاہ حسین نے گزشتہ دنوں ایک اخباری انٹرویو میں کہا ہے کہ ’’عالمِ اسلام میں شیعہ سنی تنازعات کو ہوا دینے کی مسلسل کوشش کی جا رہی ہے اور بین الاقوامی سطح پر سازشی عناصر اس سلسلہ میں مصروفِ عمل ہیں‘‘۔ اسلام میں ایک جائز حد کے اندر اختلافِ رائے کی افادیت و ضرورت کو تسلیم کیا گیا ہے اور جناب نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے اس علمی اختلاف کو رحمت قرار دیا ہے۔ لیکن یہ اختلاف وہ ہے جو علمی مسائل میں جائز حدود کے اندر نیک نیتی سے دینی امور کی وضاحت کے لیے کیا جائے ۔ ۔ ۔ مکمل تحریر فرقہ وارانہ کشیدگی اور ہماری ذمہ داری

۱۲ مارچ ۱۹۸۲ء

قرآن کریم کی بے حرمتی کا افسوسناک واقعہ / روسی جارحیت اور انتخابات / قادیانی اور آئین

گزشتہ دنوں سرکاری ذرائع سے یہ خبر قومی اخبارات میں شائع ہوئی ہے کہ تخریب کاروں کے خلاف پولیس کی مہم کے دوران قرآنِ کریم کی بے حرمتی کا یہ افسوسناک سانحہ سامنے آیا ہے کہ کچھ بدبخت عناصر نے قرآن کریم کے نسخوں کو اندر سے کاٹ کر ان میں بارود بھرا اور پھر ان نسخوں کو بعض اہم شخصیات کو پیش کرنے کا پروگرام بنایا۔ اس ضمن میں اخبارات اور ٹیلی ویژن کے ذریعے قرآن کریم کے کٹے ہوئے نسخے کی نمائش بھی کی گئی ہے اور ملک کے طول و عرض میں اس المناک واقعہ پر احتجاج اور غم و غصہ کے اظہار کا سلسلہ جاری ہے ۔ ۔ ۔ مکمل تحریر قرآن کریم کی بے حرمتی کا افسوسناک واقعہ / روسی جارحیت اور انتخابات / قادیانی اور آئین

۵ مارچ ۱۹۸۲ء

ماضی کے اتحادوں کے نتائج سامنے رکھیں / عائلی قوانین کا مسئلہ / جلیل القدر پیغمبرؑ کے خلاف ہرزہ سرائی

ان دنوں اخبارات میں نمایاں طور پر شائع ہونے والی زیادہ تر خبروں کا عنوان وہ سیاسی گفت و شنید ہے جو کالعدم سیاسی جماعتوں کے رہنماؤں کے درمیان سیاسی عمل کی بحالی کے لیے اشتراکِ عمل کی غرض سے جاری ہے۔ اس سلسلہ میں بعض ملاقاتوں کی خبریں بھی منظر عام پر آئی ہیں اور اس تگ و دو کے مثبت اور منفی پہلوؤں پر بیانات بھی شائع ہو رہے ہیں۔ اس سلسلہ میں اصولی طور پر اشتراک و تعاون کی اہمیت و ضرورت سے کوئی بھی انکار نہیں کر سکتا ۔ ۔ ۔ مکمل تحریر ماضی کے اتحادوں کے نتائج سامنے رکھیں / عائلی قوانین کا مسئلہ / جلیل القدر پیغمبرؑ کے خلاف ہرزہ سرائی

۲۹ جنوری ۱۹۸۲ء

جمعیۃ علماء ہند پر ایک دستاویزی کتاب

محترمہ پروین روزینہ صاحبہ نے ’’جمعیۃ علماء ہند‘‘ کو اپنی جستجو اور تحقیقی تگ و دو کا عنوان بنایا ہے۔ انہوں نے کئی برسوں کی مسلسل محنت اور تلاش کے بعد جمعیۃ علماء ہند سے متعلق اہم دستاویزات کو جمع کر کے انہیں دو جلدوں میں شائع کرنے کا اہتمام کیا ہے۔ اس وقت ان کی کتاب ’’جمعیۃ علماء ہند‘‘ کی جلد اول ہمارے سامنے ہے جو پانچ سو سے زائد صفحات پر مشتمل ہے اور اس میں مصنفہ نے ۱۹۱۹ء سے ۱۹۴۵ء تک جمعیۃ کے آٹھ مرکزی اجلاسوں کے فیصلے، قراردادیں، خطبہ ہائے صدارت، خطبہ ہائے استقبالیہ اور دیگر ضروری تفصیلات کو یکجا کر دیا ہے ۔ ۔ ۔ مکمل تحریر جمعیۃ علماء ہند پر ایک دستاویزی کتاب

یکم جنوری ۱۹۸۲ء

افغانستان، پولینڈ اور اسرائیل

افغانستان میں روسی جارحیت کی شدت میں ابھی کمی نہیں ہوئی تھی کہ مشرقی یورپ کے ملک پولینڈ میں ’’کمیونسٹ مارشل لاء‘‘ کا نفاذ اور اسرائیل کی طرف سے جولان کی متنازعہ حیثیت کو ختم کرنے کی کاروائی نے عالمی سیاست کو ایک نیا رخ دے دیا ہے اور پوری دنیا اس نئی کشمکش کے نتائج پر سوچنے پر مجبور ہوگئی ہے۔ افغانستان میں عالمی کمیونزم اپنے فروغ اور پولینڈ میں بقاء کی جنگ لڑنے میں مصروف ہے لیکن افغانستان میں غیور افغان عوام اور پولینڈ میں آزاد مزدور تنظیم سالیڈیریٹی سوویت یونین کے ارادوں کی تکمیل میں حائل ہیں ۔ ۔ ۔ مکمل تحریر افغانستان، پولینڈ اور اسرائیل

یکم جنوری ۱۹۸۲ء

حضرت مولانا عبد المالکؒ اور حضرت حافظ سراج الدینؒ

ہفتہ گزشتہ دو بزرگ ہستیاں اس جہانِ فانی سے کوچ کر گئیں، انا للہ وانا الیہ راجعون۔ حضرت مولانا عبد المالکؒ حضرت مولانا دوست محمد قریشیؒ کے خلیفہ تھے۔ مرحوم شب زندہ دار صوفی منش بزرگ تھے، حضرات اکابر کی شخصیت کا آئینہ دار تھے اور آپ کے حلقۂ ارادت میں ہر طبقہ کے لوگ شامل تھے ۔۔۔ حضرت حافظ سراج الدینؒ قیام پاکستان کے بعد سے ضلع میانوالی کی آبادی کلورکوٹ میں قیام پذیر تھے۔ قرآن کریم حفظ و ناظرہ کی تعلیم کے بعد قرآن کریم کی تعلیم و تدریس کا سلسلہ شروع کر دیا تھا اور آخر وقت تک اس سلسلہ سے ناطہ جوڑے رکھا ۔ ۔ ۔ مکمل تحریر حضرت مولانا عبد المالکؒ اور حضرت حافظ سراج الدینؒ

یکم جنوری ۱۹۸۲ء

حضرت مولانا مفتی محمودؒ

مولانا مفتی محمودؒ کو ہم سے جدا ہوئے ایک برس ہو چکا ہے۔ مفتی محمودؒ بنیادی طور پر ایک عالم دین تھے لیکن ان کی صلاحیتیں اور خوبیاں اس قدر متنوع تھیں کہ ان کے باعث موافق اور مخالف سب حلقوں میں ان کا دلی احترام پایا جاتا تھا اور ان کا بڑے سے بڑا مخالف بھی ان کے علم، تدبر اور حوصلہ کا معترف تھا۔ مرحوم کا نمایاں وصف ٹھوس اور ہمہ گیر علم تھا جو انہوں نے اپنے وقت کے جید علماء اور اساتذہ کی صحبت میں حاصل کیا اور پھر اسے افتاء و تدریس کی برس ہا برس کی علمی و تجرباتی زندگی میں پختہ کیا ۔ ۔ ۔ مکمل تحریر حضرت مولانا مفتی محمودؒ

۳۰ اکتوبر ۱۹۸۱ء

چودھری ظہور الٰہی شہید

چودھری ظہور الٰہی مرحوم نے پاکستان کی قومی سیاست میں جو سرگرم کردار ادا کیا ہے اور قومی تحریکات میں جس جوش و جذبہ کے ساتھ شریک ہوتے رہے ہیں اس کے باعث قومی حلقوں میں ان کی المناک موت اور وحشیانہ فائرنگ کی اس مذموم کاروائی پر گہرے رنج و غم اور شدید غم و غصہ کے جذبات کا مسلسل اظہار کیا جا رہا ہے ۔ ۔ ۔ چودھری ظہور الٰہی مرحوم کا شمار ان معدودے چند لیگی راہنماؤں میں ہوتا ہے جنہوں نے اپنی مخلصانہ روش، تحمل، رواداری اور اجتماعی سوچ کے باعث کم و بیش سبھی محب وطن حلقوں سے احترام اور اعتماد حاصل کیا ۔ ۔ ۔ مکمل تحریر چودھری ظہور الٰہی شہید

۹ اکتوبر ۱۹۸۱ء

Pages

نوٹ:   بہت سے مضامین کے عنوانات اصل شائع کرنے والے جریدوں سے مختلف رکھے گئے ہیں۔ بعض طویل مضامین اور محاضرات میں ضروری ترامیم کی گئی ہیں جن میں ذیلی عنوانات کا اضافہ اور جملوں کی تسہیل وغیرہ شامل ہیں۔ مولانا راشدی نے تقریباً تمام تحریروں کی نظر ثانی کی ہے۔