حضرت مولانا شفیق الرحمان درخواستیؒ

مجلہ/مقام/زیراہتمام: 
روزنامہ اسلام، لاہور
تاریخ اشاعت: 
۱۰ ستمبر ۲۰۰۷ء

حضرت مولانا شفیق الرحمان درخواستیؒ کا شمار حدیث نبوی صلی اللہ علیہ وسلم کے نامور اساتذہ میں ہوتا ہے، انہوں نے حافظ الحدیث حضرت مولانا محمد عبد اللہ درخواستی نور اللہ مرقدہ کے زیرسایہ تعلیم و تربیت حاصل کی اور پھر ان کی سرپرستی میں ان کی مسند پر بیٹھ کر سالہا سال تک قرآن و حدیث کا درس دیا۔ وہ حضرت درخواستیؒ کے نواسے تھے، ان کے شاگرد و تربیت یافتہ تھے اور ان کی علمی روایات کے امین تھے۔ مولانا شفیق الرحمان درخواستیؒ کی تدریس و خطابت اور عادات و اخلاق میں حضرت درخواستیؒ کی جھلک دکھائی دیتی تھی اور وہ حق گوئی اور راست بازی میں اپنے عظیم خاندان کی روایات کے وارث تھے۔

حضرت مولانا محمد عبد اللہ درخواستیؒ کا اپنا ایک مخصوص طرز تھا اور تدریس کا منفرد انداز تھا جسے اپنانے کی کوشش میں حضرت مولانا شفیق الرحمان درخواستیؒ سب سے نمایاں تھے۔ حضرت مولانا عبد اللہ درخواستیؒ کے وصال کے بعد ان کے علمی ورثہ، دینی جدوجہد، جماعتی محنت، مسلکی تگ و دو اور تعلیمی روایات کے تسلسل کو قائم رکھنے میں ان کے جانشین حضرت مولانا فداء الرحمان درخواستیؒ، حضرت مولانا شفیق الرحمان درخواستیؒ، حضرت مولانا حاجی مطیع الرحمان درخواستی اور حضرت مولانا حافظ فضل الرحمان درخواستی نے اپنے اپنے انداز سے جس محنت کو جاری رکھا ہوا ہے، حضرت مولانا شفیق الرحمان درخواستیؒ کی اچانک وفات نے اس میں بہت بڑا خلاء پیدا کر دیا ہے اور یہ بلاشبہ درخواستی خاندان کے لیے ایک بڑا صدمہ ہے۔

دعا ہے کہ اللہ تعالیٰ مولانا شفیق الرحمان درخواستیؒ کو جوارِ رحمت میں جگہ دیں اور ان کے بیٹوں، بھائیوں اور دیگر اہل خاندان کو صبر و حوصلہ کے ساتھ ان کی دینی و تعلیمی جدوجہد کو جاری رکھنے کی توفیق سے نوازیں، آمین یا رب العالمین۔