مجلس احرار اسلام ۔ پس منظر اور جدوجہد

مجلہ/مقام/زیراہتمام: 
روزنامہ اوصاف، اسلام آباد
تاریخ اشاعت: 
۷ مئی ۱۹۹۹ء
اصل عنوان: 
مجلسِ احرارِ اسلام کا نیا دفتر

گزشتہ دنوں لاہور میں مجلس احرار اسلام پاکستان کے نئے مرکزی دفتر کے افتتاح کی تقریب میں شمولیت کا موقع ملا۔ یہ دفتر مجلس احرار نے وحدت روڈ پر نیو مسلم ٹاؤن کی حسین اسٹریٹ میں خریدا ہے۔ دو کنال کے رقبہ پر مشتمل وسیع کوٹھی ہے اور اپنے محل وقوع کے لحاظ سے انتہائی موزوں ہے۔ اسی گلی میں مسجد عائشہؓ اور مجلس تحفظ ختم نبوت کا دفتر بھی ہے۔ دونوں کو ویگن کا کرم آباد اسٹاپ قریب پڑتا ہے۔ ابن امیر شریعت مولانا سید عطاء المحسن شاہ بخاری نے احرار کا پرچم لہرا کر دفتر کا افتتاح کیا۔ اور اس موقع پر ایک تقریب بھی ہوئی جس سے سرکردہ احرار راہنماؤں اور ان کے علاوہ مختلف دینی جماعتوں کے زعماء نے خطاب کیا جبکہ ملک کے مختلف حصوں سے آئے ہوئے کارکنوں کی ایک بڑی تعداد نے شرکت کی۔

بیسویں صدی عیسوی کے تیسرے عشرے کے دوران جب ترکی کی خلافت عثمانیہ کے خلاف یورپی حکومتوں کی سازشیں صاف طور پر نظر آنے لگیں اور خلافت عثمانیہ کے خاتمہ کے آثار نمودار ہوئے تو برصغیر (پاکستان، ہندوستان اور بنگلہ دیش) کے مسلمانوں میں اضطراب کی لہر دوڑ گئی۔ خلافت عثمانیہ نے کم و بیش پانچ سو سال تک عالم اسلام کی قیادت کی ہے اور حرمین شریفین مکہ مکرمہ و مدینہ منورہ کے ساتھ ساتھ بیت المقدس کی پہرہ داری کا مقدس فریضہ سر انجام دیا ہے۔ مشرقی یورپ جہاں آج بوسنیا کے بعد کوسووو کے مسلمانوں کا قتل عام ہو رہا ہے اور پیش بین نگاہیں اس کے بعد البانیہ کے مسلمانوں کا نمبر لگتا دیکھ رہی ہیں، اس خطہ میں صلیبی قوتوں کو صدیوں تک خلافت عثمانیہ کے ہاتھوں شرمناک ہزیمت کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ جب یہودیوں نے عالمی سطح پر طے شدہ پروگرام کے مطابق عثمانی خلیفہ سے فلسطین کی زمین کا کچھ حصہ مانگا تاکہ وہاں وہ اپنا مرکز قائم کر سکیں تو خلیفہ عثمانی نے یہودیوں کو زمین دینے سے انکار کر دیا اور کہا کہ وہ یہودیوں کو فلسطین کی ایک انچ زمین دینے کے روادار بھی نہیں ہیں۔

اس پر یہودیوں نے پینترا بدلا اور صلیبی جنگوں میں مسلمانوں کے ہاتھوں یورپی اقوام کی مسلسل شکستوں کے پس منظر سے فائدہ اٹھاتے ہوئے خلافت عثمانیہ کے خلاف سازشوں کا بازار گرم کر دیا۔ اس کا نتیجہ ہمارے سامنے ہے کہ بیک وقت عربوں اور ترکوں میں قوم پرستی کی تحریکیں کھڑی کر کے خلافت عثمانیہ کا تیاپانچہ کر دیا گیا۔ عرب ممالک میں ترکی کی خلافت عثمانیہ کے خلاف کام کرنے والے مختلف گروپوں کی پشت پناہی کی گئی۔ عرب قوم پرستی کے نام سے خطہ عرب سے ترک افواج کو باہر نکال کر چھوٹی چھوٹی کئی عرب حکومتیں قائم کی گئیں اور ان میں سے اسرائیل کے نام سے ایک یہودی ریاست نکال لی گئی جو آج پورے عالم اسلام کے لیے ایک چیلنج کی حیثیت اختیار کر چکی ہے۔

خلافت عثمانیہ کے خلاف یورپی حکومتوں کی بڑھتی ہوئی سازشوں سے مضطرب ہو کر متحدہ ہندوستان میں تحریک آزادی کے قائدین نے ’’تحریک خلافت‘‘ شروع کی جس کی قیادت مولانا محمد علی جوہرؒ اور مولانا شوکت علیؒ کے ہاتھ میں تھی۔ اس تحریک نے ترکی کی خلافت عثمانیہ کو بچانے میں تو کامیابی حاصل نہ کی، البتہ اس جوش و خروش میں برصغیر کے مسلمانوں میں بیداری کی ایک نئی لہر پیدا ہوئی اور تحریک آزادی کو جوش و جذبہ سے سرشار راہنماؤں اور کارکنوں کی ایک تازہ دم کھیپ مل گئی۔

پنجاب میں تحریک خلافت کے سرکردہ راہنماؤں میں مولانا حبیب الرحمن لدھیانویؒ ، مولانا سید محمد داؤد غزنویؒ ، چوہدری افضل حقؒ اور امیر شریعت سید عطاء اللہ شاہ بخاریؒ نمایاں تھے۔ جب استنبول میں خلافت عثمانیہ کا خاتمہ ہوا اور مصطفی کمال اتاترک نے آخری عثمانی خلیفہ کو جلاوطن کر کے خلافت کا باب بند کر دیا تو خلافت کے تحفظ کے لیے متحدہ ہندوستان میں چلائی جانے والی تحریک بھی غیر مؤثر ہوگئی۔ اس کے ساتھ ہی قومی سطح پر تحریک آزادی کے حوالہ سے بعض مسائل پر مرکزی تحریک خلافت اور پنجاب کی تحریک خلافت میں اختلافات نمودار ہونے لگے۔ اس کے نتیجے میں پنجاب کی تحریک خلافت کے لیڈروں نے مرکز سے اپنا راستہ الگ کرتے ہوئے ’’مجلس احرار اسلام ہند‘‘ کے نام سے ایک نیا پلیٹ فارم قائم کر لیا۔ احرار راہنما مکمل آزادی کے جذبہ سے سرشار تھے اور انہیں چوہدری افضل حقؒ کا دماغ، مولانا حبیب الرحمن لدھیانویؒ کا جوش عمل اور امیر شریعت سید عطاء اللہ شاہ بخاریؒ کی ساحرانہ خطابت میسر تھی۔ اس لیے دیکھتے ہی دیکھتے پورے ہندوستان میں احرار کا طوطی بولنے لگا۔

میں احرار میں کبھی شامل نہیں رہا، میری ذہنی و فکری وابستگی شیخ الہند مولانا محمود حسن دیوبندیؒ کی تحریک سے ہے جس کی نمائندگی جمعیۃ علماء ہند کرتی رہی ہے، اور اب رسمی طور پر کسی حد تک جمعیۃ علماء اسلام کر رہی ہے۔ البتہ تاریخ کے ایک طالب علم کے طور پر برصغیر کی تحریک آزادی میں ’’مجلس احرار اسلام‘‘ کے پرجوش کردار کا ہمیشہ معترف رہا ہوں ۔ اور تحریک آزادی میں احرار راہنماؤں کو چار باتوں کے کریڈٹ کا مستحق سمجھتا ہوں:

  1. پورے برصغیر بالخصوص پنجاب میں عوامی سطح پر مسلمانوں کو آزادی کی تحریک کے لیے بیدار کرنا احرار راہنماؤں کا ہی کام تھا جنہوں نے اپنی ولولہ انگیز خطابت سے عام مسلمانوں میں آزادی کی خواہش کو ابھارا، انہیں سڑکوں پر لا کر فرنگی حکمرانوں کے خلاف صف آراء کر دیا، اور آزادی خواہ راہنماؤں اور کارکنوں سے جیلیں بھر دیں۔
  2. انگریز حکمرانوں سے مراعات حاصل کرنے والے طبقوں مثلاً جاگیرداروں، نوابوں اور زمینداروں کے خلاف غریب اور کمزور طبقات میں بغاوت کے جراثیم کی پرورش کی اور انہیں آزادی کی جدوجہد کا حوصلہ بخشا۔
  3. آزادی کی جدوجہد میں نہ صرف مذہبی شعور کو اجاگر کیا بلکہ مختلف مذہبی مکاتب فکر کے سرکردہ راہنماؤں کو یکجا کر کے مشترکہ قیادت فراہم کی۔ چنانچہ مجلس احرار اسلام کے اس دور میں مولانا حبیب الرحمن لدھیانویؒ اور امیر شریعت سید عطاء اللہ شاہ بخاریؒ کے ساتھ مولانا سید محمد داؤد غزنویؒ ، صاحبزادہ سید فیض الحسنؒ اور مولانا مظہر علی اظہرؒ صف اول کی قیادت میں دکھائی دیتے ہیں۔
  4. فرنگی حکمرانوں نے اس خطہ کے مسلمانوں میں فکری انتشار پیدا کرنے کے لیے قادیانی نبوت کا ڈھونگ رچایا تو اسے بے نقاب کرنے کے لیے اگرچہ علمی حلقوں میں حضرت علامہ سید محمد انور شاہ کشمیریؒ ، حضرت پیر سید مہر علی شاہ گولڑویؒ ، اور حضرت مولانا ثناء اللہ امرتسریؒ نے خاصا کام کر لیا تھا مگر عوامی سطح پر اس سازش کو ننگا کرنے کا سہرا احرار راہنماؤں کے سر ہے جنہوں نے برصغیر کے طول و عرض میں اس فتنہ کے خلاف عوامی نفرت کا طوفان کھڑا کر دیا۔

ایک دور ایسا تھا جب پنجاب میں مجلس احرار اسلام سب سے بڑی سیاسی قوت شمار ہوتی تھی۔ اور اگر احرار راہنما یونینسٹ حکومت کی طرف سے ’’مسجد شہید گنج‘‘ کے عنوان سے بچھائے گئے دام ہمرنگ زمین کا شکار نہ ہو جاتے تو چوتھے عشرہ کے وسط میں ہونے والے انتخابات میں مجلس احرار اسلام پنجاب کی سب سے بڑی جماعت کے طور پر سامنے آتی۔ مگر سر فضل حسین سے منسوب یہ جملہ ایک تاریخی حقیقت ثابت ہوا کہ ’’میں نے احرار کو مسجد شہید گنج کے ملبہ میں دفن کر دیا ہے۔‘‘

احرار کی تاریخ تحریکات کی تاریخ ہے۔ اور تحریک کشمیر سے لے کر تحریک ختم نبوت تک پرجوش عوامی تحریکات کا ایک لمبا سلسلہ ہے جس کے تمغوں سے مجلس احرار اسلام کا سینہ مزین ہے۔ حتیٰ کہ احرار کارکنوں کے بارے میں ایک دور میں یہ کہا جاتا تھا کہ کسی احرار کارکن کی جیب میں پانچ روپے ہوں تو وہ یہ سوچنے لگتا ہے کہ کون سی ریاست کے نواب کے خلاف تحریک چلانی چاہیے۔

تحریک پاکستان میں مجلس احرار مخالف کیمپ میں تھی۔ یہ احرار راہنماؤں کا اپنا موقف تھا اور انہوں نے قیام پاکستان کی مخالفت کی اور کھل کر کی۔ لیکن جب پاکستان بن گیا تو لاہور میں جلسہ عام منعقد کر کے احرار قائدین نے کھلے بندوں اپنی شکست تسلیم کرنے کا اعلان کیا اور پھر خود کو پاکستان کے استحکام و سالمیت، اسلامی نظام کے نفاذ، اور ختم نبوت کے تحفظ کے لیے وقف کر دیا۔

اس پس منظر میں مجلس احرار اسلام کی طرف سے نئے مرکزی دفتر کے افتتاح کی تقریب میں شمولیت کی دعوت ملی تو اسے قبول نہ کرنا میرے لیے ممکن ہی نہ تھا۔ یہ دفتر بیرون دہلی دروازہ لاہور میں شاہ محمد غوثؒ کے سامنے احرار کے پرانے دفتر کو فروخت کر کے اس کی رقم سے خریدا گیا ہے۔ وہ پرانا دفتر اب کسی مارکیٹ میں تبدیل ہو جائے گا جہاں بیٹھ کر سید عطاء اللہ شاہ بخاریؒ ، چوہدری افضل حقؒ ، مولانا حبیب الرحمن لدھیانویؒ ، مولانا سید محمود غزنویؒ ، مولانا مظہر علی اظہرؒ ، آغا شورش کاشمیریؒ ، مولانا غلام غوث ہزارویؒ ، صاحبزادہ سید فیض الحسنؒ ، شیخ حسام الدینؒ ، ماسٹر تاج الدین انصاریؒ ، اور مولانا محمد علی جالندھریؒ جیسے زعماء ہندوستان کی آزادی کی تدبیریں سوچا کرتے تھے اور عوامی تحریکوں کے منصوبے بنایا کرتے تھے۔ زندہ قومیں ایسی جگہوں کو قومی یادگار کے طور پر محفوظ کر لیا کرتی ہیں مگر ہمیں ابھی ’’آزادی کی زندگی‘‘ ملی کہاں ہے کہ ایسی سوچیں ہمارے ذہنوں تک رسائی حاصل کر سکیں؟ بہرحال مجلس احرار کو اس کے نئے دفتر کی مبارکباد دیتا ہوں اور دعاگو ہوں کہ احرار کا مستقبل اس کے شاندار ماضی کا آئینہ دار ثابت ہو، آمین ثم آمین۔